ارنب گوسوامی پولیس کی حراست میں

نئی دہلی: بھارت کے متنازعہ ٹی وی اینکر ارنب گوسوامی کو مہاراشٹرا پولیس نے دو ساتھیوں سمیت حراست میں لے لیا ہے۔

 ارنب گوسوامی پولیس کی حراست میں

بھارتی میڈیا کے مطابق انتہا پسند نظریات کے حامی اینکر ارنب گوسوامی کو مہاراشٹرا پولیس نے اُن کے گھر سے گرفتار کر لیا ہے جب کہ دیگر دو افراد فیروز شیخ اور نتیش ساردا کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔

مہاراشٹرا پولیس کا کہنا ہے کہ یہ گرفتاریاں 53 سالہ انٹیریئر ڈیزائنر انواے نائیک اور ان کی والدہ کی 2018 میں خودکشی کے مقدمے میں کی گئی ہیں۔

خود کشی سے قبل تحریر کیے گئے خط میں ارنب کو مورد الزام ٹھہراتے ہوئے ڈیزائنر نے لکھا تھا کہ ٹی وی اینکر نے ریپبلک نیٹ ورک اسٹوڈیو کی انٹیریر ڈیزائنگ کے عوض معاوضہ ادا نہیں کیا جس پر وہ دل برداشتہ تھے۔

انوے نائیک نے ارنب سوامی کے ٹی وی چینل کا اسٹوڈیو ڈیزائن کیا تھا تاہم چینل نے انہیں 83 لاکھ ادا نہیں کیے تھے جب کہ دیگر کمپنیوں نے بھی انہیں معاوضہ دیا تھا اس طرح تین کمپنیوں کی مجموعی رقم چار کروڑ بنتی ہے۔

ادھر مہا راشٹرا کے وزیر داخلہ انیل دیشمکھ نے ارنب سوامی کی گرفتاری کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ قانون سے کوئی بھی بالا تر نہیں ہے تاہم وفاقی وزیر داخلہ امیت شاہ نے ارنب سوامی گرفتاری کو صحافت پر حملہ قرار دیا۔

دوسری جانب ارنب گوسوامی کے ریپبلک چینل کا دعویٰ ہے کہ اینکر کو اُس کیس میں گرفتار کیا گیا ہے جو ماضی میں زیر تفتیش تھا مگر بعدازاں اس کیس کو داخل دفتر کر دیا گیا تھا اور اب دوبارہ اس کیس کو زندہ کیا گیا ہے۔

What's Your Reaction?

like
0
dislike
0
love
0
funny
0
angry
0
sad
0
wow
0