سعودی عرب نے اسرائیل کے ساتھ تعلقات پر مشروط آمادگی ظاہر کردی

سعودی عرب نے اسرائیل کے ساتھ تعلقات پر مشروط آمادگی ظاہر کردی ہے۔

سعودی عرب نے اسرائیل کے ساتھ تعلقات پر مشروط آمادگی ظاہر کردی

بحرین میں ایک کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سعودی وزیر خارجہ فیصل بن فرحان کا کہنا تھا کہ ہم اسرائیل کے ساتھ معمول کے مکمل تعلقات استوار کرنے کے لیے ہمیشہ سے تیار رہے ہیں۔

فیصل بن فرحان کاکہنا تھاکہ خطے میں اسرائیل کو مقام ملنے اور پائیداری کے لیے آزاد فلسطینی ریاست کے قیام کی ضرورت ہے۔

سعودی وزیر خارجہ کاکہنا تھاکہ اسرائیلیوں اور فلسطینیوں کو دوبارہ مذاکرات کی میز پر لانے پر توجہ مرکوز کی جانی چاہیے، ایک آزاد فلسطینی ریاست کے قیام ہی سے خطے میں حقیقی امن قائم ہوگا۔

واضح رہے کہ سعودی عرب اس سے قبل بھی کہہ چکا ہے کہ 2002ء کے عرب امن معاہدے پر عملدرآمد اور آزاد فلسطینی ریاست کے قیام کے بعد ہی وہ اسرائیل سے سفارتی تعلقات قائم کرے گا۔

عرب امن معاہدے کے مطابق اسرائیل کو اپنی سرحد 1967ء میں ہونے والی جنگ سے پہلے والی حدود تک واپس لے جانا ہوگی۔

خیال رہے کہ حالیہ عرصے کے دوران 3 عرب ممالک متحدہ عرب امارات، بحرین اور سوڈان نے اسرائیل سے تعلقات قائم کیے ہیں اور سعودی عرب کے حوالے سے بھی مختلف افواہیں زیرگردش ہیں۔

گزشتہ دنوں اسرائیلی وزیراعظم بن یامین نیتن یاہو اور سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے درمیان سعودی عرب میں ہی ایک خفیہ ملاقات کی خبریں آئی تھیں تاہم سعودی عرب کی جانب سے اس خبر کی تردید کی گئی لیکن اسرائیلی میڈیا مسلسل اس خبر کے مصدقہ ہونے پر اصرار کرتا رہا۔

What's Your Reaction?

like
0
dislike
0
love
0
funny
0
angry
0
sad
0
wow
0