وائٹ ہائوس سے نہیں نکلوں گا،ٹرمپ بپھر گیا

امریکہ جنگ کے دہانے پر کئی اہم فیصلے ہونے کے قریب،امریکہ کی تاریخ بدلنے لگی

وائٹ ہائوس سے نہیں نکلوں گا،ٹرمپ بپھر گیا

گزشتہ اڑتالیس گھنٹوں میں امریکی تاریخ میں کئی اہم واقعے پیش آچکے ہیں۔ڈونلڈ ٹرمپ امریکہ کا واحد صدر بن گیا ہے جس نے الیکشن ہارنے کے بعد اپنی مدت صدارت میں کچھ عرصہ باقی ہونے سے پہلے سیکرٹری دفاع کو عہدے سے فارغ کر دیا۔یہی نہیں بلکہ ٹرمپ نے الیکشن رزلٹ رکوانے اور الیکشن کو معطل کرانے کے لیے قانونی چارہ جوئی کا اہتمام بھی کر لیا ہے۔

ٹرمپ کے حامی وائٹ ہاﺅس میں مورچہ زن ہو چکے اور کسی صورت وائٹ ہاﺅس خالی ہوتا دکھائی نہیں دیتا۔جوبائیڈن کی ٹیم کو کسی حوالے سے بھی کوئی رعایت نہیں دی جارہی ایسے لگتا ہے کہ یہ سارے حالات ایک ہو کر امریکہ کو خانہ جنگی کی طرف لے کر جا رہے ہیں۔یہاں تک کہ جنرل ایڈمنسٹریٹر سروسز کے ایڈمنسٹریٹر ایملی ڈبلیو مرفی نے اسرٹینمنٹ کا لیٹر جوبائیڈن کی ٹیم کو دینے سے انکار کر دیا ہے۔

اس کا واضح مطلب ہے کہ وائٹ ہاﺅس کے انتقال اقتدار کا پراسز شروع کرانے سے انکار کر دیا ہے

س کے ساتھ ہی اٹارنی جنرل نے الیکشن میں مبینہ دھاندلی کے حوالے سے تحقیقات شروع کروا دی ہیں۔جبکہ ٹرمپ نے بذات خود وائٹ ہاﺅس سے نکلنے سے انکار کردیا ہے۔یہ ساری چیزیں یہ بتا رہی ہیں کہ امریکہ میں افراتفری ہی نہیں بلکہ دنگے فساد ہونے والے ہیں اور امریکہ خود کو ایک نہ ختم ہونے والی جنگ کے سپرد کرنے جا رہا ہے۔

تاہم سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ٹرمپ کی طرف سے شدت پر مبنی جتنی بھی اقدامات کیے جا رہے ہیں وہ الیکشن ہارنے کے نتیجے میںمحض غصہ نکالنے کی غرض سے کررہا ہے یا پھر اس کی ٹیم سر جوڑ کر بیٹھی اور مکمل منصوبہ بندی کے تحت کر رہی ہے۔دیکھنا یہ ہے کہ اگر ڈونلڈ ٹرمپ اپنے موقف پرڈٹ جاتا ہے تو امریکہ کا مستقبل کیا ہو گا کیا امریکہ کی اسٹیبلشمنٹ کوئی کردار ادا کر پائے گی یا نہیں یہ آنے والاوقت بتائے گا۔

What's Your Reaction?

like
0
dislike
0
love
0
funny
0
angry
0
sad
0
wow
0