کراچی میں ’خلائی ادرک‘ کی فروخت

کراچی: پاکستان میں جہاں روزمرہ کھانوں میں استعمال ہونے والی اشیاء کی قیمتیں اپنی انتہائی بلندی کو چھو رہی ہیں، وہیں ایک سبزی فروش نے انکشاف کیا ہے کہ کراچی کی سبزی منڈی میں ’خلائی ادرک‘ دستیاب ہے جس کی قیمت 1,000 روپے فی کلوگرام ہے۔

 کراچی میں ’خلائی ادرک‘ کی فروخت

پاکستان میں روزمرہ اشیائے خور و نوش بشمول سبزیاں، دالیں، گوشت، انڈے، آٹا اور چینی وغیرہ اتنی زیادہ مہنگی ہوچکی ہیں کہ وطنِ عزیز کی تاریخ میں اس کوئی مثال موجود نہیں۔

یوں لگتا ہے جیسے مہنگائی کا ایک غیر اعلانیہ مقابلہ پورے ملک کے طول و عرض میں جاری ہے جسے روکنے کےلیے اسلام آباد کی ’ریاستِ مدینہ‘ سے لے کر سندھ کی ’عوام دوست سرکار‘ تک نے بے بسی کے نام پر بے حسی اختیار کر رکھی ہے۔

یہی وہ حالات ہیں جن میں دیگر اشیائے خور و نوش کے ساتھ ادرک کی قیمت صرف ایک ہفتے میں 640 روپے فی کلوگرام سے بڑھ کر 1,000 روپے فی کلوگرام تک پہنچ چکی ہے۔

ناظم آباد کی ایک خاتونِ خانہ نے ’’ایکسپریس نیوز‘‘ کو بتایا کہ جب آج صبح انہوں نے سبزی والے سے ادرک کے بارے میں پوچھا تو اس نے کہا کہ وہ ادرک نہیں لایا کیونکہ سبزی منڈی میں ادرک کی قیمت ایک ہزار روپے فی کلوگرام پہنچ چکی ہے۔

خاتون نے پوچھا کہ کیا ادرک امریکا سے آنا شروع ہوگئی ہے؟ اس پر سبزی والے نے برجستہ جواب دیا: ’’نہیں باجی، ادرک آج کل خلاء سے آرہی ہے… کراچی میں تو خلائی ادرک فروخت ہورہی ہے۔‘‘

بات صرف ادرک تک محدود نہیں بلکہ تین کروڑ جیتے جاگتے نفوس کے شہرِ خموشاں میں سب سے سستی انسانی جان رہ گئی ہے جو مفت میں لی جارہی ہے جبکہ قانون نافذ کرنے والے ادارے خاموش تماشائی بن کر اپنے شریکِ جرم ہونے کا ثبوت دے رہے ہیں۔

عین یہی معاملہ کمشنر کراچی کی نام نہاد ’’پرائس کنٹرول کمیٹی‘‘ کا ہے جس نے رشوت کے عوض گراں فروشوں کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے اور سبزی منڈی میں بڑے آڑھتیوں اور ہول سیلرز کو گرفتار کرنے کے بجائے گلی محلوں میں عام سبزی فروشوں پر ’’چھاپے‘‘ مارنے میں مصروف ہے۔

What's Your Reaction?

like
0
dislike
0
love
0
funny
0
angry
0
sad
0
wow
0