2ماہ کے بیٹے کی ماما اور بابا کے ساتھ ولیمے میں انٹری

کورونا وائرس کی وجہ سے عام طور پر اکثر لوگوں کی شادیاں ملتوی ہوئیں اور اگر کسی کی شادی ہوئی تو پھر ولیمے کی تقریب ملتوی ہوئی جب کہ اسی طرح کورونا کی وجہ سے متاثر ہونے والے ایک جوڑے نے شادی کے بعد اگلے سال ولیمہ کیا اور اس ولیمے کی انوکھی بات یہ تھی کہ اس میں ان کا بچہ بھی اپنے والدین کے ہمراہ ولیمے میں شامل ہوا۔

2ماہ کے بیٹے کی ماما اور بابا کے ساتھ ولیمے میں انٹری

گزشتہ برس 13 مارچ 2020کو رشتہ ازدواج میں منسلک ہونے والے ریان شیخ اور انمول کا ولیمہ بھی کورونا کے پیش نظر لاک ڈاؤن کی نذر ہوگیا۔

حافظ آباد سے تعلق رکھنے والے ریان شیخ نے جیو نیوز کو بتایا کہ گزشتہ برس ان کی شادی 13 مارچ جب کہ ولیمہ 14 مارچ کو طے پایا تھا تاہم شادی کے اگلے روز ہی حکومت کی جانب سے کورونا کے باعث شادیوں سمیت آؤٹ ڈور سرگرمیوں پر پابندی لگادی گئی۔

ریان شیخ نے کہا کہ یہ ہمارے لیے ایک نئی پیش رفت تھی جس کے باعث ہم توقع کررہے تھے کہ کچھ روز بعد لاک ڈاؤن ختم ہوجائے گا اور پھر ہمارے ولیمے کا انعقاد کیا جائے گا لیکن توقع کے برعکس لاک ڈاؤن رمضان اور عید کے بعد تک جاری رہا۔

ریان کا کہنا تھا کہ ہمارے کئی رشتے دار ایسے بھی ہیں جنہیں سعودیہ اور دیگر ممالک سے آنے کے بعد ولیمے میں شرکت کرنا تھی لیکن خاندان نے فیصلہ کیا کہ ولیمے کی تقریب کو کچھ روز تک ملتوی کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ گزشتہ برس جب ستمبر اور اکتوبر کے دوران لاک ڈاؤن ختم ہوا تو ان کی اہلیہ امید سے تھی اوروہ اس حالت میں نہیں تھیں کہ اپنے ولیمے کی تقریب میں شرکت کرسکیں لہٰذا انہوں نے فیصلہ کیا کہ ولیمے کی تقریب کا انعقاد بچے کی پیدائش کے بعد کیا جائے۔

ریان کے مطابق ان کے بچے کی پیدائش 9 جنوری 2021 کو ہوئی اور ان کے خاندان کی جانب سے 23 مارچ 2021کو یوم پاکستان کے روز ولیمے کی تقریب کا انعقاد کیا گیا۔

بچے سمیت ولیمے میں انٹری دینے کے حوالے سے ریان کا کہنا تھا کہ ہم نے فیصلہ کیا تھا کہ بیٹا ہماری انٹری کے وقت دادا دادی کے پاس ہوگا لیکن جب میں اور انمول ہال میں داخل ہوئے تو بچے نے رونا شروع کردیا جس کے باعث انمول کو بچے کو گود میں لے کر ولیمے میں انٹری دینا پڑی۔

What's Your Reaction?

like
0
dislike
0
love
0
funny
0
angry
0
sad
0
wow
0